بھیکاری۔۔۔۔۔۔“

بھیکاری۔۔۔۔۔۔“

 

ہر ایک بھکاری بنا کر رستے میں بٹھایا ہوا ہے۔۔۔ اور ہر ایک خود کو ملک سمجھتا ہے ۔۔۔ جب تک ٹھوکر نہیں لگتی ۔۔۔ جب تک گھٹنوں پر نہیں گرتا۔۔۔ اپنی اوقات کا پتہ ہی نہیں چلتا۔۔۔۔ وجود کے نصیب میں ہے بھکاری ہونا۔۔۔ بس “ ذات “ بھکاری نہیں ہوسکتی۔۔۔ وجود کے مقدر میں مانگنا ہے۔۔۔۔“ذات “ کا وصف دینا ہے۔۔۔ میں کیا۔۔۔ تو کیا۔۔۔۔ سب بھکاری ہیں۔۔۔ آج نہیں تو کل ۔۔۔ کل نہیں تو پرسوں کبھی نہ کبھی بھکاری بننا ہی پڑتا ہے۔۔۔ مانگنا ہی ہوتا ہے۔۔۔ کوئی عشق مانگتا ہے۔۔۔ کوئی دنیا اور ۔۔۔۔جو یہ نہیں مانگتا وہ۔۔۔ خواہش کا ختم ہوجانا مانگتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔“

عمیرہ احمد ۔۔۔۔ شہرِ ذات

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: