ہور سناؤ کی حال چال اے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟

ہور سناؤ کی حال چال اے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟

میرے ایک دوست۔۔۔۔ مشتاق بٹ۔۔۔ ایک طویل عرصہ سے امریکہ میں مقیم ہیں ۔۔۔ اور بال بچوں کے ہمراہ مقیم ہیں۔۔۔ ہر دو سال بعد وطن کا چکر ضرور لگاتے ہیں۔۔۔۔اور ائیرپورٹ پر اُترتے ہی ۔۔۔ پہلا سوال یہ کرتے ہیں کہ ۔۔۔ ہور سناؤ کی حال چال اے۔۔۔۔؟ چونکہ بہت عزیز دوست ہیں ۔۔۔ اس لئے سب لوگوں کی خواہش ہوتی ہے کہ ۔۔۔ انہیں گھمایا پھرایا جائے ۔۔۔ ان کی خاطر تواضع کی جائے ۔۔۔ مگر بٹ صاحب سفر کی تھکن اُتارنے کے بعد۔۔۔ سب سے پہلی فرمائش یہ کرتے ہیں کہ ۔۔۔ بھائیوں مجھ سے باتیں کروِ۔۔۔۔۔ میں ترس گیا ہواں ۔۔۔۔ باتیں کرنے کے لئے ۔۔۔۔ صرف باتیں ۔۔۔؟ ہم شروع شروع میں بے حد حیران ہوئے کہ ۔۔۔ مشتاق کو کیا ہوگیا ہے۔۔ شاید اپنی امریکی معلومات عامہ کا رُعب جمانے کے لئے ۔۔ ہم سے باتیں کرنا چاہتا ہے۔۔۔ لیکن معلوم ہوا کہ ۔۔۔ نہیں مشتاق صرف ایسی باتیں کرنا چاہتا ہے ۔۔۔ جن کاکوئی مطلب نہ ہو۔۔۔۔ کوئی سر پئیر نہ ہو۔۔۔ یعنی باتیں برائے باتیں ۔۔۔ ہمشہ کہتا ہے کہ ۔۔ یاروں امریکہ میں کسی کے پاس اتنا وقت ہی نہیں ۔۔۔ کہ وہ تم سے باتیں کر سکے ۔۔۔ اپنے بیٹے کے ساتھ گپ شپ لگانے کی کوشش کرتا ہوں ۔۔۔ تو وہ کہتا ہے ۔۔۔ ڈیڈی آپ میرا وقت ضائع کر رہے ہیں ۔۔۔ بیٹی کہتی ہے ۔۔۔ ڈیڈی آپ ذرا اپنا میڈیکل چیک اپ کروایئے ۔۔۔۔ مینٹل چیک اپ۔۔۔۔ اس لئے نہیں کہتی کہ ۔۔۔۔ ابھی پوری طرح امریکہ نہیں ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔اور یاروں میں ان تیس برسوں کا کیا کروں جو میں نے ۔۔۔ اپنے وطن میں گپیں لگاتے گزارے ہیں ۔۔۔ یں باتیں نہیں کر سکتا ۔۔۔ تو میرا پیٹ اَپھر جاتا ہے ۔۔۔ اور اسی اپھرا کو درست کرنے کے لئے ۔۔ میں ہر دوسرے برس پاکستان آجاتا ہوں ۔۔۔۔ چنانچہ مجھ سے باتیں کرو۔۔۔۔ اور جب باتیں ختم ہوجاتی تھیں ۔۔۔ تو مشتاق بٹ ۔۔۔ کے پاس ایک اور ٹرمپ کارڈ ہوتا تھا۔۔۔ اور وہ مسکراتا ہوا کہتا تھا۔۔۔ ہور سناؤ کی حال چال اے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟ جب اس کے ساتھ باتیں کرتے کرتے تمام دوستوں کے حلق سوکھ جاتے تو وہ میری دکان پر آجاتا۔۔۔ اور وہاں سڑک پر کھڑے خوانچہ فروشوں  اور ریڑھیوں ۔۔۔ والوں کے ساتھ گفتگو کا آغاز کر دیتا ۔۔۔ واپسی پر ہمیشہ بے حد خوش و خرم ہوتا۔۔۔ اور اپنے وسیع پیٹ پر ہاتھ پھیرکر کہتا ۔۔۔ بس پاکستان آنے کا مقصد پورا ہوگیا ہے۔۔۔ اب میں آئیندہ دو سال کے لئے بالکل تندرست رہوں گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔“

مستنصر حسین تارڑ کی کتاب ۔۔۔۔“ گزارا نہیں ہوتا“ سے اقتباس

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: