جو دلوں کے بھید خوب جانتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

،

 

فَبِأَيِّ آلَاءِ رَبِّكُمَا تُكَذِّبَانِ

 

ہمارا رب ۔۔۔۔۔


جو دلوں کے بھید خوب جانتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

آج دن کے وقت میں ۔۔۔۔ اور میری امی۔۔۔۔ ہمارے گھر کے پاس ہفتہ بازار لگتا ہے۔۔۔ وہاں گئے ۔۔۔۔ کچھ میچنگ کے ڈوپٹے اور بیلیں لینی تھی۔۔۔ اب بازار سے خریداری کر کے گھر واپس آرہے تھے۔۔۔اب بازار گھر سے اتنا دور نہیں ۔۔۔ کہ گاڑی لے کے جائی جائے۔۔۔تو ہم پیدل ہی آرہے تھے راستے میں ہمارے علاقے کی جو مارکٹ ہے۔۔۔۔۔ وہاں سےاتنی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
زبردست بریانی۔۔۔۔۔۔۔ کی خوشبو آرہی تھی۔۔۔۔ کہ ایک دم سے بھوک کا دورہ پڑھ گیا۔۔۔ اور پیٹ کے چوہے بلبلانے لگے۔۔۔۔ہماری مارکٹ کا وہ بریانی والا بہت مشہور ہے۔۔۔۔سُنا ہے اس کی بریانی کھانے لوگ بڑی دور دور سے آتے ہیں۔۔۔۔
خیر میں نے امی کو کھا کیا تو زبردست بریانی کی خوشبو آرہی ہے۔۔۔ امی نے بھی کہا ہاں۔۔۔۔
بہت کم کبھی ہی ایسا ہوتا ہے کہ ہم بازار سے منگوائیں۔۔۔۔ اور آئی بھی کبھی تو بھائی ہی لا کر دے دیتے ہیں۔۔۔
اب میں نے امی کو کہا کہ۔۔۔ اتنی زبردست خوشبو آرہی ہے۔۔ کہ بھوک لگ گئی۔۔۔
اب بریانی کے معاملے میں۔۔۔۔
میں مصطفیٰ کمال(سابق سٹی ناظم)  کی اس بات سے سو فیصد متفق ہوں۔۔۔۔
کے اللہ تعالیٰ نے بریانی کے لیے ۔۔۔ پیٹ میں ایک خاص جگہ رکھی ہوتی ہے۔۔۔۔۔ آپ کا پیٹ بھلے بھرا ہوا ہو آپ کے سامنے بریانی آجائے تو کھائے بغیر نہیں رہ سکتے۔۔۔

بلکہ میرا تو ماننا ہے ۔۔۔ کہ بریانی کو پاکستان کی قومی ڈش بنا دینا چاہیے۔۔۔

اچھا میری عادت ہے۔۔۔ میں ناشتہ کر لیتی ہوں۔۔۔ تو دن کا کھانا نہیں کھاتی۔۔۔ بس رات کا کھانا جلدی کھا لیتی ہوں۔۔۔ جس پر امی سے مجھے بہت ڈانٹ پڑھتی ہے۔۔۔ کہ بھئی یہ بلاوجہ کی ڈئٹنگ کرنے کی کیا ضرورت ہے۔۔۔ جب کہ میرا مقصد ڈائٹنگ کرنا نہیں ۔۔۔ بلکہ بھوک کا نہ ہونا ہوتا ہے۔۔۔خیر کبھی اتفاقا مجھے بھوک لگ جائے تو امی کا بس نہیں چلتا۔۔۔ وہ خود جلدی سے کھانا کھلانے بیٹھ جائیں۔۔۔ وہ اللہ کا اتنا شکر ادا کرتی ہیں۔۔۔ کہ ہماری اولاد کو بھوک تو لگی آج۔۔۔۔۔

خیر اب میں نے کھا کہ خوشبو سے بھوک لگ گئی۔۔۔
تو امی جھٹ سے بولیں۔۔۔ کہ چلو۔۔۔۔ لے کر چلتے ہیں۔۔۔۔میں نے کہا امی عجیب لگے گا۔۔۔
اب ارادہ کینسل ہوا کہ اچھا نہیں لگے گا ایسے بریانی خریدنے چلے جائیں۔۔۔۔امی نے کہا چلو کل سنڈے ہے۔۔۔  کل بریانی بنا لیں گے۔۔۔۔۔
ہمیں بیکری سے چیزیں لینی تھیں۔۔۔
وہاں گئے۔۔۔ تو اتفاق سے ہمارے پرانے پڑوسی کا بچہ دیکھا وہ ہم لوگوں کو سلام کرنے آگیا۔۔۔۔
امی نے اس سے پوچھا کہاں جارہے ہو۔۔۔ اس وقت۔۔۔ تو کہنے لگا۔۔۔ آنٹی میں بریانی لینے جارہا ہوں۔۔۔۔
اب امی اور میں ایک دوسرے کو دیکھ کر ہنسنے لگے۔۔۔۔
اب امی جو ہیں۔۔۔ وہ ایک ماں ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اور بھئی ماں تو ماں ہوتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب ان کو پتا ہو ۔۔۔ کہ ان کی اولاد کو کسی چیز کی خواہش ہورہی ہے۔۔۔۔
اور وہ پوری کرنی ان کے بس میں ہو۔۔۔
تو ہر حال میں پوری کرنے کی کوشش کرتی ہیں۔۔۔۔۔
انہوں نے اس بچے کو پیسے دیے اور بریانی منگوا لی۔۔۔ جب تک ہم لوگوں نے بیکری سے چیزیں خرید لیں۔۔۔۔۔
اب آتے وقت۔۔۔۔ راستے میں امی بولیں۔۔۔ کے کبھی کبھی کی خواہشیں پوری ضرور ہوجاتی ہیں۔۔۔۔۔
اچھا میری  ایک عادت ہے۔۔۔ بریانی کے ساتھ ویسے تو نا رائتہ نہ سالاد کچھ نہیں چاہیے۔۔ مگر ۔۔۔ اگرزردہ ہو تو وہ میں تھوڑا سا بریانی کے ساتھ مکس کر کے کھاتی ہوں۔۔۔ بچپن میں مامو کو ایسے کھاتے دیکھ مجھے بھی یہ عادت پڑی۔۔ اور مزہ بھی آتا ہے۔۔۔۔
اب باقاعدہ سے کوئی خواہش نہیں ہوئی کہ زردہ بھی ہوتا تو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بس ویسے ہی دل میں خیال آیا زردے کا۔۔۔ جو امی سے بھی نہیں کہا۔۔۔ نہ خود سوچا۔۔۔۔۔۔
اب گھر آئے۔۔۔۔ ہم نے لاک کھول کر اندر آ کر بیٹے تھے۔۔۔۔
کہ دروازے پر ناک ہوئی۔۔۔۔۔۔
جا کر دیکھا۔۔۔ تو اوپر والی بھابھی نے ہمارے برتن اور ساتھ میں ایک پلیٹ میں کوئی چیز ڈھانپ کر بھیجی تھی۔۔۔۔۔
اب ان کا شکریہ ادا کیا۔۔۔ اور کچن میں جا کر دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آپ لوگ یقین کر سکتے۔۔۔ کہ میں پلیٹ سے کور ہٹا کر دیکھ کر۔۔۔ ایک دم ھکا بکا رہ گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اور ہنسی بھی آنے لگی۔۔۔ اور اللہ کا شکر بھی ادا کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کہ بس د ل میں ایک خیال ہی تو آیا تھا۔۔۔ جس پر میں نے خود بھی دھیان نہیں دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہ اُس خیال کو دوبارہ ذہن میں آنے دیا۔۔۔۔۔
مگر۔۔۔۔۔۔۔
ہمارا رب تو ہماری شہ رگ سے بھی قریب ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہمارے دلوں میں چھپے بھید بھی جان لیتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرے دماغ میں ایک دم سے یہ الفاظ گونجے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


فَبِأَيِّ آلَاءِ رَبِّكُمَا تُكَذِّبَانِ

اور میری آنکھوں میں آنسو آگئے۔۔۔۔۔۔۔۔
میں نے جا کر امی کو بتایا۔۔۔۔۔۔۔اور اپنے دل میں آنے والے زردے کے خیال کا بتایا۔۔۔۔ تو امی بھی کہنے لگیں۔۔۔  دیکھو اللہ کا کتنا کرم ہے ۔۔۔۔کیسے ہماری دل میں آنے والے خیال کو پورا کر دیا۔۔۔۔

اللہ کا شکر ادا کرا ہم لوگوں نے۔۔۔۔۔
کہ اللہ تعالیٰ ہم جیسے گناہگاروں کو کتنا نواز رہا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔
زندگی بھر آتی جاتی ہر سانس کے ساتھ بھی اللہ تعالیٰ کا شکر ادا کریں ۔۔۔۔ تو بھی اُس کے کرم اُس کی رحمتوں ۔۔۔۔۔۔ کا شکرانہ ادا نہیں کر سکتے۔۔۔۔۔۔۔۔

اللہ تعالیٰ ہمیں توفیق عطا فرمائے۔۔۔۔ کہ اُس کی اُس طرح سے عطاعت کر سکیں۔۔۔ جیسے وہ ہمیں نوازتا ہے۔۔۔۔
اور ہماری سوچ اور ہماری بینائی کو اتنی وسعت عطا فرما۔۔۔ کہ جس سے اُس کے کرم اور نوازشوں ک
و

دیکھ ۔ ۔ ۔ سمجھ ۔ ۔۔  اور محسوس ۔ ۔۔  کر سکیں۔۔۔۔۔۔۔ اور شکر گزار بنیں۔۔۔۔۔آمین

والسلام
ساریہ صدیقی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: