اس بار عجب کرب کا احساس ہوا ہے

 

اس بار عجب کرب کا احساس ہوا ہے

لگتا ہے مری ذات میں کچھ ٹوٹ گیا ہے

یہ کون ہے جو شب کی سیاہی کو لپیٹے

سنسان سی سڑکوں پہ یونہی گھوم رہا ہے

اک عمر سے میں اپنے تصرف میں نہیں ہوں

جس شہر میں ہوں اسکی عجب آب و ہوا ہے

آنکھوں میں دہکتے ہوئے سورج کو سمیٹے

اک شخص سمندر کی طرف دیکھ رہا ہے

آہٹ ہے نہ جھونکا ہے نہ خوشبو ہے نہ دستک

پھر کس نے مجھے خواب سے بیدار کیا ہے

جس آخری تارے پہ ترا نام لکھا تھا

وہ آخری تارا بھی روش ڈوب چکا ہے

 

 

شمیم روش

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: